کیمیائے سعادت امام غزالی کی شاہکار تصنیف ہے جو بارہویں صدی عیسوی کے اوائل عشروں میں لکھی گئی تھی۔

اقتباساتترميم

  • گزشتہ انبیاء کی کتب میں مذکور تھا کہ اُن سے اللہ تعالیٰ نے یوں ارشاد فرمایا: ’’جس نے اپنے نفس کو پہچان لیا، اُس نے اپنے رب کو پہچان لیا۔‘‘ اِس سے معلوم ہوتا ہے کہ آدمی کا دِل آئینے کی طرح ہے۔ جو کوئی اِس میں غور کرے گا، خدا کو دیکھے گا، اور بہت سے لوگ اپنے میں غور کرتے ہیں مگر خدا کو نہیں پہچانتے۔ تو جس اعتبار سے دِل کی معرفت کا آئینہ ہے، اُس لحاظ سے دِل کو جاننا ضروری ہے۔
    • باب اول: معرفت الٰہی، صفحہ 59۔

مزید پڑھیںترميم

مزید دیکھیںترميم

ویکیپیڈیا میں اس مضمون کے لیے رجوع کریں کیمیائے سعادت.