دریچے واصف علی واصف کی مشہور کتاب ہے جو اُن کے انتقال کے بعد 2004ء میں شائع ہوئی۔

اقتباساتترميم

  • شکر کا طریقہ یہ ہے کہ گِلہ نہ ہو، بندوں کا گلہ نہ ہو، خالق کا گلہ نہ ہو، زِندگی کا گلہ نہ ہو، شب و رَوز کا گلہ نہ ہو۔ زِندگی کو حاصل اور محرومیوں کی شکل میں نہ تولو بلکہ زِندگی میں اپنی عافیت کو، عطا کرنے والے محسنوں کو تلاش کرو اور محسن کے احسان کا شکریہ اداء کرو۔
    • دریچے، صفحہ 15۔

اقوالترميم

  • اگر لوگوں کے ظاہری حالات برابر نہ ہوں تب بھی اُن پر اللہ کا فضل ہوسکتا ہے۔
    • دریچے، صفحہ 9۔
  • اگر آپ سے نیک عمل نہیں ہو رہا تو اِس کا مطلب یہ ہے کہ غلط عمل نے اُس کا راستہ روکا ہوا ہے، اِس لیے آپ غلط عمل کو نکال دو۔
    • دریچے، صفحہ 10۔
  • اپنے غم کو غصہ نہ بناؤ کیونکہ غم کو غصہ وہ بناتا ہے جو کسی تقدیر کو نہیں مانتا اور جو کسی خدا کو نہیں مانتا۔
    • دریچے، صفحہ 11۔
  • بد آدمی بدعمل نہ کرے تب بھی بد ہے اور نیک آدمی نیکی نہ کرے تب بھی نیک ہے کیونکہ نیکی نیت کا نام ہے۔
    • دریچے، صفحہ 12۔
  • تنہائی میں اللہ سے کیے ہوئے وعدوں کو پورا کرو، گِلہ نہ کرو، پھر عبادت کرو تو پوری زِندگی عبادت بن جائے گی۔
    • دریچے، صفحہ 91۔

مزید پڑھیںترميم